شمالی وزیرستان میں دہشت گردوں سے مقابلے میں 4 جوان شہید: آئی ایس پی آر – پاکستان

فوج کے میڈیا ونگ نے جمعہ کو ایک بیان میں کہا کہ قبائلی ضلع شمالی وزیرستان کے علاقے میر علی میں انٹیلی جنس کی بنیاد پر آپریشن (آئی بی او) کے دوران دہشت گردوں کے ساتھ فائرنگ کے تبادلے میں پاک فوج کے چار جوان مارے گئے۔

انٹر سروسز پبلک ریلیشنز (آئی ایس پی آر) کے مطابق سیکیورٹی فورسز نے علاقے میں دہشت گردوں کی موجودگی کی اطلاع پر آئی بی او کی کارروائی کی۔

چھاپے کے دوران دہشت گردوں اور فوجیوں کے درمیان شدید فائرنگ کا تبادلہ ہوا جس کے نتیجے میں 4 فوجی جوان شہید ہوگئے۔ شہید فوجیوں کی شناخت حوالدار منور، سپاہی ذکاء اللہ، سپاہی فرحان اور سپاہی شیراج کے نام سے ہوئی ہے۔

ٹریک رکھنے کے لیے: شمالی وزیرستان میں ہمہ جہت فوجی آپریشن شروع

ادھر ارد گرد کے علاقوں میں دہشت گردوں کی موجودگی کی اطلاع کے بعد سیکورٹی فورسز نے ٹینک کے علاقے میں ایک اور آپریشن شروع کیا۔

آپریشن کے دوران دو دہشت گرد مارے گئے جن کی شناخت بعد میں شاہ زیب عرف ذاکر اور دانیال کے نام سے ہوئی۔ چھاپے کے دوران سیکورٹی فورسز نے اسلحہ بھی برآمد کیا ہے۔

آئی ایس پی آر کے بیان میں کہا گیا ہے کہ “یہ دہشت گرد سیکورٹی فورسز کے خلاف حملوں، ٹارگٹ کلنگ اور اغوا برائے تاوان سمیت متعدد دہشت گردانہ سرگرمیوں میں ملوث تھے۔”

اس سے قبل 24 دسمبر کو بلوچستان کے ضلع کیچ میں سیکیورٹی فورسز کی چیک پوسٹ پر دہشت گردوں کے حملے میں دو فوجی ہلاک ہوگئے تھے۔

آئی ایس پی آر کا کہنا تھا کہ حملہ کے وقت دہشت گردوں کا سراغ لگانے کے لیے علاقے میں فالو اپ آپریشن جاری تھا۔

اسی طرح 14 دسمبر کو بلوچستان میں پاک ایران سرحد کے قریب ایک پوسٹ پر دہشت گردوں کے حملے میں سیکیورٹی فورسز کا ایک رکن ہلاک ہوگیا۔